The mysterious Mr Safi ابن صفی

Written on 6:02 AM by Mohammad Talha

Mahmood Farooqui wrote - I have been reading Ibn-e Safi and thinking about one of the last pieces written by political scientist and activist Arvind Das in the Biblio. He was reviewing a book called, I think, the modern invention of work.
Arvind had posited, roughly, that work can coexist with pleasure but what distinguishes it from a pleasurable pursuit is the discipline of work, its regimented structure, it’s time-bound, task-related and its operation in a restricted-space.
One may enjoy picking newts off a plant, but it becomes work when one has to perform the task regardless of desire or mood. It is the element of compulsion, the taking away of one’s will that distinguishes work from pleasure. I was thinking of it especially because Ibn-e Safi was a great favourite when I was young but I was now re-reading him after years, at great speed, foraging the novels for ideas.
In part because I was meeting a deadline and in part because I was reading him for a particular purpose, desiring a result, the reading gave me little enjoyment.
That is a shame, because Ibn-e Safi of the Jasoosi Dunia fame was one reason why I never developed a taste for western detective/mystery fiction. Almost all his novels, however flimsy the plot, displayed great command over characterisation and dialogue.
Although he plagiarised his plots from many well-known masters, he so Indianised them that they became a genre of their own in the new language.
More mature than Rajan Iqbal and more sophisticated than Vikrant, nothing in Hindi could compare with Ibn-e Safi’s quality, even if one includes dubious translations of James Hadley Chase, which were only ever sought for the ‘hot scenes.’ In addition, his wit and comic ability earned him accolades and attention even from the literary establishment of Urdu.
I had once thought of doing a serious study of Ibn-e Safi and the idealised world, his fiction represented. He grew popular in the years immediately before partition although his novels continued to be set in a politically neutral terrain long afterward. I was especially keen to tease out the lineaments of the utopian and the secular state that emerges in most of his early novels. The country’s head is never mentioned by name, nor are any other international facts or names.
Unlike a Forsyth or a Le Carre, Ibn-e Safi is not after verisimilitude; instead he invents his terrain with great confidence and boldness. In his work, India stretches from the Hindu Kush to the Far East, though South India is rarely invoked.
There is an international dimension to the battles and there is a too palpable desire to show the goras their place and uphold India’s greatness and integrity.
Ibn-e Safi was born as Asrar Ahmad in Nara, Allahabad, India and migrated to Pakistan in the later part of his life. The Chronicle of Pakistan, an official site so commemorates him, ‘A huge section of the population is estimated to have become hooked to mystery stories. Ibn-e Safi, presently living in Karachi, is supposed to be the father of this new cult since he launched his monthly Jasoosi Duniya from Allahabad (India) in 1952.
It is not unusual for Safi’s books to be sold at black market prices in Pakistan as well as in India, where they are originally published every month’.
His lead detective Imran is a gawkish, garrulous and an inept agent in his apparent life, complete with an equally eccentric team of housekeepers Suleiman, Gulrukh and the burly Joseph. Covertly though he is the menacing and invisible x-2, the voice being his only identity for the team.
Like Ibn-e Safi’s other set, Colonel Faridi and Captain Hameed (a desi-ised Holmes and Watson duo) Imran is in reality an undercover secret agent who both works in and runs his own outfit for the intelligence bureau of the foreign office.
Religion rarely makes an overt presence, nor does the community. Imran happens to work for the good of India where, incidentally as it were, all the top posts are occupied by Muslims.
Inter-alia his eccentrities, verbal duels especially with women (over whom he has a BOND-ish hold) and his run-ins with the obese and filthy rich Qasim, always escaping from his bullying and shrewish wife, take up much of Imran’s time. There is a lot of flirtation but little sex, much action but most of it realistic.
In the later novels though, especially ones that are in print today India is replaced by a mysterious Islamic Republic, without significant changes to the geography or atmosphere.
Perhaps because he himself is said to have worked with the ISI in the seventies, the novels specifically mention ISI as the controlling agency and an Islamic Republic, the Mamlekat-e-Islami or the Mamlekat-e-Khudadad (the god-given kingdom, a term popular with Bhutto) becomes the land of action.
While I have always wanted to write on Ibn-e Safi the timing of this piece and the manner in which it was published was not exactly of my own choosing, though I cannot deny that I enjoyed writing it. But does this lack of control and the compulsion to deliver mean that it was a chore?
No, because the controlling element, the desire was of my own choice, and perhaps it is this right to chose that frees me. Eventually. (story Link with thanks)

ابن صفی

Written on 5:34 AM by Mohammad Talha

ایک زمانہ تھا کہ دنیائے ادب میں "اسرار ناروی" کا نام بڑا مقبول ہو رہا تھا۔ اس جیسے ابھرتے ہوئے شاعر سے نقادانِ فن کو خاصی توقعات وابستہ ہو چلی تھیں۔ اور بقول مجنوں گورکھپوری :
خانوادہ نوح ناروی کے اس سپوت کی اُٹھان بڑی خوش آئیند تھی !
عین اسی زمانے میں ، جبکہ "طغرل فرغان" کے طنزیہ و مزاحیہ شہ پارے بھی قبولیتِ عام کی سند پا رہے تھے کہ اچانک یہ دونوں نام (اسرار ناروی اور طغرل فرغان) دنیائے ادب سے ناپید ہو گئے۔

یہ ہندوستان پر سے برطانوی اقتدار ختم ہونے سے کچھ دنوں پہلے کی بات ہے۔ مندرجہ بالا دونوں نام ختم ہو جانے کے بعد ایک تیسرا نام ابھر کر سامنے آیا : ابن صفی (بی۔اے) جو جاسوسی کہانیوں کے سلسلے میں بڑا مشہور ہو رہا ہے۔ یہ تینوں نام : اسرار ناروی ، طغرل فرغان اور ابن صفی ۔۔۔ دراصل ایک ہی شخص "اسرار احمد" کے قلمی بہروپ تھے۔

ibn-e-safi

 

پہلے دو ناموں کو اسی شخص کا تیسرا قدآور نام "ابن صفی" نگل گیا۔ صرف "ابن صفی" ہی کہنا کافی نہیں ، "بی۔اے" کا دُم چھلا بھی ساتھ لگا ہوا ہے جو ایک طرح کا تخلص ہو کر رہ گیا ہے۔ جس طرح ابن صفی کے ساتھ بی۔اے چپک کر رہ گیا ہے اسی طرح جاسوسی ادب کے ساتھ ابن صفی کا نام ایسا لازم و ملزوم ہو گیا ہے کہ یہ نام لئے بغیر اردو میں جاسوسی ادب کا کوئی تذکرہ مکمل ہی نہیں ہو سکتا۔
ابن صفی کا پُراسرار نام اختیار کرنے میں اسرار احمد صاحب کی انفرادیت پسند افتاد طبع کو بھی خاصا دخل رہا ہے۔ وہ تنوع کے شائق ہیں اس لئے جدت طرازیاں فرماتے رہتے ہیں۔

شعر و ادب کے دبستان سے ازخود جِلا وطنی اختیار کرنے کا بھی کچھ یہی سبب رہا ہے۔ اپنے لئے علیحدہ راہ نکالنے کے شوق نے سرّی ادب کے خارزار میں آبلہ پائی کرائی۔ انہوں نے ایک ایسے زمانے میں سرّی ادب کے شعبہ میں قدم رکھا جب چند منشی قسم افراد کے غیرمعیاری تراجم و طبع زاد ناولوں کے گھٹیا پن کی وجہ سے اس صنف کو خارج از ادب سمجھا جاتا تھا۔

اس زمانے میں جاسوسی ناولوں کے نام بمع عرفیت ہوا کرتے تھے مثلاً : فومانچو کی بیٹی عرف سنہری جوتا۔
اسی بنا پر اسرار احمد صاحب نے "ابن صفی۔ بی اے" کا قلمی نام اختیار کیا تاکہ نام کی معقولیت اور تعلیم کی سند سے قارئین کو ناول کے معیاری ہونے کا احساس ہو۔ اس کے ساتھ ہی ان کے ذہن میں یہ خیال بھی موجود تھا کہ اگر یہ تجربہ ناکام ہو جائے تو اس کی زد میں صرف "ابن صفی" آئے ، اسرار احمد ، طغرل فرغان اور اسرار ناروی محفوظ رہیں۔

لیکن ہوا یہ کہ تجربہ نہ صرف کامیاب رہا بلکہ "ابن صفی۔ بی اے" ایسا مقبول ہوا کہ بقیہ تمام ناموں پر غالب آ گیا۔
ابن صفی نے اپنے لئے ایک نئی راہ ڈھونڈی اور اس شعبہ (سرّی ادب) کے اجارہ دار منشیوں کی اجارہ داری ختم کر کے سری ادب کی اہمیت اور مقام کو تسلیم کروا لیا۔

Ibn e Safi’s Novels are Gems of Urdu Literature

Written on 5:18 AM by Mohammad Talha

This was a long overdue post and was delayed due to unavoidable reasons. The seminar on Ibn-e-Safi was held in Delhi sometime back.

Eminent Urdu scholar from Germany, Christina Oesterheld said that the characters of Ibn-e-Safi’s novels live a Western lifestyle but are quintessentially Oriental when it comes to their behaviour towards women.

The main characters Imran and Faridi don’t look at women as an object of sex, rather for them a woman is a symbol of purity and dignity. They treat her as equal in all regards. Dr Christina, who is the senior lecturer at Institute of South Asian Studies, Heidelberg, Germany regretted that Ibn-e-Safi’s writing was not given enough attention in comparison to so-called serious literature.

ibn-e-safi

The Sahitya Akademi president Dr Gopi Chand Narang questioned why ‘Jasoosi Adab’ is not considered literature and if it is not literature then why the word ‘adab’ (literature) is attached to it, during such seminars. He said that Ibn-e-Safi was published in Devanagari and Bengali as well, and rather than ignoring his works, there is need to change our own attitude.

Professor Akhtarul Wasey said that Ibn-e-Safi not only taught Urdu to a generation but also taught us nuances of language, story plot and an understanding of the world, especially the third world countries. He said that Ibn-i-Safi B.A. had indicated several things in the 60s and 70s which we are witnessing today.

The participants said that the novels of Ibn Safi are gems of Urdu literature. Often in serious literature the readers is left detched and searching for answers, which is not the case in his novels. And they are serious nonetheless on another plane as the satire is unmistakeable.

 ibn e safi 2 Another famous litterateur, Izhar Asar, who has written hundreds of novels and considered a pillar of ‘popular literature’, attended the seminar, which was held under the aegis of Urdu Acdemy. Yunus Dehlvi, Khalid Mahmood, Dr Sadiq, Shabana Nazeer, Najma Rahmani, Kifayat Dehliv, Sheen Kaf Nizam, MR Qasmi, Abu Bakr Abbas, M Arif Iqbal, Arujumand Ara, Maula Bakhsh, Seemab Sultanpuri and Moin Shadab were amongst the other participants.

Interestingly, later at a seminar in Mumbai, legendary Urdu writer Intizar Husain, who apparently tried to shock the audience with the comment that he ‘had neither read Ibn Safi nor felt he was important enough‘, invited flak for his comments. There was severe criticism of the comment on the stage itself. Several litterateurs reminded Intezar Hussain that though one may be entitled to his personal views, and his literary status apart, Ibn Safi can’t be simply dismissed as just another writer. (story Link with thanks)

About Me Remembering Ibn-e-Safi ابن صفی

Written on 5:13 AM by Mohammad Talha

One of the greatest writers in history, Ibn-e-Safi, (ابن صفی) who took Urdu fiction and detective writings to dizzy heights in the decades of 50s, 60s and 70s, would be remembered at a function organised by India’s premier literary organisation, the Sahitya Akademi.

ibn e safi Ibn-e-Safi, not only created great characters but took detective writing in Urdu to a stage where it was acknowledged internationally. For years, it was debated whether Jasoosi Adab could be termed as Adab.

But it seems his immense contribution is now being recognised. Christina Oesterheld will deliver the guest lecture on Ibn-i-Safi’s novels. She is from Institute of South Asian Studies (Heidelberg) Germany and the event would be held in the Academy auditorium on March 16 at 6 pm.

Asrar Ahamd Narvi alias Ibn Safi BA who wrote under several pen names wrote over 240 novels and was solely responsible for the survival of Urdu readership in Northern India after partition when Hindi was patronised and Urdu banished from schools.

Ali Abbas Husaini’s Nakhat publications printed the novels in India and later Safi migrated to Pakistan. His literary taste and unique style of prose turned millions of people addicted to his novels. In Allahabad, long queues were seen the day his new novels would come on shops. Thirty years after his death Ibn Safi remains a phenonmenon unrivalled in the sub-continent. The report of the seminar is here. (story Link with thanks)

مکڑے اپنے ہم شکل پتلے بناتے ہیں

Written on 8:52 AM by Mohammad Talha

مکڑوں کی ایک قسم ہے جو شکاریوں کو دھوکہ دینے کے لیے اپنے خدوخال سے ملتا جلتا جعلی پتلا تیار کرتی ہے۔
شاید مکڑا پہلا جانور ہے جو کہ اپنے خدوخال جیسا پتلا تیار کرتا ہے۔ یہ مشاہدہ حال ہی میں اینیمل بیہیویئر نامی جرنل میں شائع ہوا ہے۔ سائنسدانوں کے مطابق مکڑوں کے اس عمل سے اس بات کی سمجھ آتی ہے کہ مکڑے کیوں اپنے جالوں میں عجیب و غریب شکل کی اشیاء موجود ہوتی ہیں۔
کئی جانور شکاریوں سے بچنے کی بہت سے تراکیب اپناتے ہیں لیکن کوئی جانور بھی اپنے خدوخال جتنا اور اس سے ملتا جلتا پتلا نہیں بناتا۔
تاہم سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ ہر مکڑا اپنے جال کو ایک ہی طریقے سے نہیں سجاتا۔ ’ہمارا خیال ہے کہ جال کی سجاوٹ مختلف طریقوں سے کی جاتی ہے اور یہ مختلف مکڑوں میں مختلف ہوتی ہے۔‘ ان کا کہنا ہے کہ زیادہ تر مکڑے اپنا جال ریشمی دھاگے سے بنتے ہیں۔
ایسا کرنے کی کئی وجوہات ہو سکتی ہیں۔ ایک تو یہ کہ اس سے جال مضبوط بنتا ہے۔ دوسرا یہ کہ اگر غلطی سے کوئی بڑا جانور جال میں آ جائے تو جال ٹوٹے نہ اور تیسرا یہ کہ اس سے آپ چاروں طرف دیکھ سکتے ہیں اور شکاری کو آتے دیکھ سکتے ہیں۔
تاہم سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ دوسری قسم کے مکڑے ریشمی دھاگے سے بنی سجاوٹ استعمال نہیں کرتے تاکہ وہ شکاری کو دھوکہ دے سکیں۔

ایم آئی فائیو پر بلیک میل کا الزام

Written on 8:48 AM by Mohammad Talha

لندن کے رہنے والے مسلمان نوجوانوں نے جوابی جاسوسی اور حفاظتی امور کے لیے کام کرنے والی ایجنسی پر الزام لگایا ہے کہ اُس نے انہیں مخبر بنانے کے لیے بلیک میل اور ہراساں کرنے کی مہم شروع کر رکھی ہے۔ ان کمیونٹی کارکنوں کا کہنا ہے کہ انہیں کہا گیا کہ یا تو ایم آئی فائیو کے لیے کام کرو یا ملک اور ملک سے باہر حراست کے لیے تیار ہو جاؤ۔

مسلمانوں اور صومالی پس منظر رکھنے والوں میں سماجی کام کرنے والے برطانوی پیدائشی اور شمالی لندن کے علاقے کیمڈن میں اپنی زندگی کا زیادہ حصہ گزارنے والے محمد نور کا کہنا ہے کہ برطانوی خفیہ ایجنسی ایم آئی فائیو کا ایک ایجنٹ خود کو پوسٹ مین ظاہر کرنے والے ایک پولیس افسر کے ساتھ اس کے گھر آئے۔ بی بی سی کو انٹرویو دیتے ہوئے نور محمد نے بتایا کہ وہ چاہتے تھے کہ وہ ان کے لیے مخبر کا کام کریں۔

ان کا کہنا ہے کہ 'وہ ہم سے مخبری کروانا چاہتے تھے اور اس کے لیے بلیک میل اور ہراساں کرنے والے طریقے استعمال کر رہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے لیے کام کرو نہیں تو ہم کہیں گے کہ تم بنیادی طور پر ایک دہشت گرد ہو۔ ذرا سوچیں، کوئی آپ کے دروازے پر آتا ہے، آپ کو دھمکی دیتا ہے، آپ کے گھر والوں کو دھمکاتا ہے تا کہ آپ کے آس پاس والے جان لیں کہ آپ کسی نہ کسی طرح دہشت گردی میں ملوث ہو۔ میں واقعی بہت خوفزدہ ہوا۔‘

محمد اکیلے نہیں ہیں۔ پانچ اور لوگ بھی ہیں جو برطانوی نژاد صومالی مسلمان ہیں اور ان کا بھی کہنا ہے کہ ان سے بھی حکومتی ایجنٹوں نے رابطہ کیا اور انہیں اسی طرح کی دھمکیاں دیں۔

ان لوگوں میں کوئی بھی ایسا نہیں جو کبھی دہشت گردی یا دہشت گردی سے متعلق کسی معاملے کے سلسلے گرفتار ہوا یا حراست میں رہا ہو لیکن یہ تمام کے تمام چھ افراد شمالی لندن میں ایک کمیونٹی تنظیم میں کام کرتے ہیں۔

شارہابیل لون اس تنظیم کے چئرمین ہیں اور ان کا کہنا ہے کہ 'میری تو سمجھ میں ہی نہیں آتا کے ایک ایسی تنظیم کے لوگوں کو کیوں کر نشانہ بنایا جا رہا ہے جو عقیدے سے بالا ہو کر نسلی اقلیتوں کے لیے کام کرتی ہے۔‘

انہوں نے مزید کہا 'ہمارے ساتھ سترہ نوجوان کام کرتے ہیں اور ہم نے یہ جاننے کی ہر ممکن کوشش کی ہے کہ ان چھ لوگوں کو کیوں نشانہ بنایا گیا ہے جو برطانوی صومالیائی پس منظر رکھتے ہیں۔ ہم نے اس سلسلے میں مقامی پولیس سے رابطہ کیا، ہم نے اپنے رکن پارلیمنٹ فران ڈوبسن سے بات کی لیکن یہ انتہائی شرمناک بات ہے کہ ہمیں کہیں سے کوئی جواب نہیں ملا۔‘
برطانوی وزارتِ داخلہ، ہوم آفس نے ان الزامات کے بارے میں بی بی سی کو ایک بیان جاری کیا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ وہ آپریشنل سکیورٹی معاملات پر کوئی تبصرہ نہیں کر سکتے۔ اگر کوئی یہ محسوس کرتا ہے کہ اس کے ساتھ غیر منصفانہ سلوک کیا گیا ہے تو اس کے لیے واضح طریقۂ کار ہے کہ شکایت کے بارے میں خود مختار کمشنر سے نظرثانی کی درخواست کی جا سکتی ہے۔

’حجاب کے لیے شہید خاتون‘ ، مصرسوگوار

Written on 8:45 AM by Mohammad Talha

جرمنی کی عدالت میں قتل کی گئی ایک مسلم خاتون کی لاش ان کے آبائی وطن مصر لائی گئی ہے جنہیں حجاب کے لیے شہید قرار دیا گیا ہے۔

انہیں ایک اٹھائیس سالہ جرمن شخص نے عدالت میں چاقو مار کر ہلاک کردیا تھا جسے عدالت نے خاتون کے مذہب کی توہین کرنے کا قصور وار پایا تھا۔

اکتیس برس کی مصری خاتون مروی شیربینی پر جرمن شخص ایکسل ڈبلیو نے اٹھارہ بار چاقو سے حملہ کیا تھا۔ ایکسل کو قتل کے الزام میں گرفتار کرلیا گیا ہے۔

شیربینی کے شوہر ایلوی عکاظ اس حملے میں شدید طور پر زخمی ہوئے تھے جو ہسپتال میں زندگی اور موت سے لڑ ہیں۔ عدالت میں حملے کے وقت انہوں نے اپنی بیوی کو بچانے کی کوشش کی تھی۔

شیربینی کو سکندریہ میں دفن کیا گیا ہے اور ان کے جنازے میں جرمن سفارت کاروں سمیت مصر کے اعلی اہلکاروں نے بھی شرکت جہاں پر سینکڑوں سوگوار بھی موجود تھے۔

شیربینی حجاب کے طور پر سکارف پہنتی تھیں جس پر ایکسل نے انہیں ’دہشتگرد‘ کہا تھا۔ اپنی مذہبی شناخت کی توہین کے خلاف شیربینی نے عدالت میں ایکسل کے خلاف مقدمہ کیا اور عدالت نے ایکسل کو قصوروار پاکر ان پر تقریبا پچاس ہزار روپے کا جرمانہ بھی عائد کیا تھا۔ یہ واقعہ دو ہزار آٹھ کا ہے ۔

ایکسل نے عدالت کے اسی فیصلے کے خلاف اپیل کی تھی اور مقدمے کی سماعت کے لیے شیربینی اپنے پورے خاندان کے ساتھ وہاں موجود تھیں جب قاتل نے ان پر چاقو سے حملہ کیا۔ ڈاکٹروں نے کوشش بہت کی لیکن انہیں نہیں بچایا جا سکا۔ وہ تین ماہ کی حاملہ تھیں۔ حملے کے وقت ان کا تین سالہ بیٹا بھی ان کے ساتھ تھا۔

اطلاعات کے مطابق شیربینی کے شوہر عکاظ بچانے کی کوشش میں قاتل کے چاقو اور پولیس کی گولی دونوں سے زخمی ہوئے جن کی حالت نازک ہے۔ جرمنی میں وکلاء کا کہنا ہے کہ اٹھائس سالہ شخص میں بیرونی خاص طور پر مسلمانوں سے سخت نفرت پائی جاتی ہے۔

اس کیس میں مسلم دنیا خاص طور پر مصر کی بڑی دلچسپی رہی ہے۔ مصر کے اخبارات نے اس بات پر زبردست برہمگی ظاہر کی ہے کہ آخر ایک قصور وار شخص عدالت میں چاقو کیسے لے گیا اور یہ سب عدالت میں ہونے کی اجازت کس نے دی۔ میڈیا میں شیربینی کو ’حجاب کا شہید قراردیا گیا ہے۔‘